Posts

Showing posts from May, 2019

فینٹسی

Image
"اگر یہ سارے زومبیز (Zombies)، جنھیں واکرز بھی کہتے، Undead بھی کہتے، ڈیڈ (dead) ہو کربھی ڈیڈ نہیں، اور Vampires اصل میں ہوتے تو دنیا کو کون بجاتا؟ " اس نے یہ سوال خود سے پوچھا۔ صوفے پر اکڑوں بیٹھا ہوا تھا اور اردگرد comic books بکھری پڑی تھیں، کوئی ویمپائر (Vampires) کی تھی ، کوئی زومبیز کی ، کہیں سپرمینتھا ، کہیں Batman ، Thor ، وغیرہ وغیرہ اور سامنے ٹی وی پر بھیShane واکرز کو گولیوں سے اڑا رہا تھا۔ جیسے ہی وہ تبیلے سے نکل کر آتے فوراً ہی ان کی کھوپڑی میں گولی داغ دیتا۔ "نہیں ، نہیں۔ جب برائی ہے تو اچھائی بھی ہو گی۔ سُپر مین آ جائے گا۔ وہ بھی ویمپائرز کےجیسے تیز بھاگتا ہے۔ مگر ویمپائرز تو اتنی قسم کے ہیں جو اِس اصل دنیا میں ہو گا وہ کس قسم کا ہو گا۔ کہیں وہ تیز ہیں، کہیں چہرہ اتنا سپید کے جیسے سوکھا آٹا منہ پہ ملا ہو، کہیں کالے بھی ہوتے ہیں، کوئی دھوپ سے ڈرتا۔ اور ہاں، کچھ واکرز بھی دھوپ سے ڈرتے ہوتے ہیں۔ چلو خیر، لیکن زومبیز اصل میں تو ہو نہیں سکتے، لیکن ویمپائرز کی ڈاکیومینٹری دیکھی تھیاور اُس میں ثابت کیا تھا کہ یہ اصل میں ہوتے ہیں۔اگر ہو آجائیں تو سُپرمین اور اِن …

پیسہ

Image
"تیری پین۔۔۔۔یہ دیکھ یار۔" اِس نے اپنے ساتھ بیٹھ دوست کو کہنے مار کر مخاطب کرتے ہوئے کہا۔ ساتھ والا قریب ہوا اور موبائل کی سکرین پر نظریں جما لیں۔ ایک مجرے کی ویڈیو تھی اورمجرا کرنے والی پر نوٹوں کی برسات ہو رہی تھی۔ "ادھر نہیں، ادھر دیکھ۔ یہ نوٹ دیکھ۔ کتنے ہیں پانچ پانچ سو اور ہزار کے۔"اس نے انگوٹھے سے نوٹوں کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا۔اس کے دوست نے رشک بھری نگاہ سے ہرے ہرے اور سرخی مائل نوٹوں کو دیکھا۔"یہی کام کر لیتے ہیں۔ اتنا پیسہ ہے۔ پڑھنے سے کہاں اتنا مل سکتا!"اس نے بھی اثبات میں سر ہلایا۔اور اس کام کی بابت اندر ہی اندر سوچنا شروع کر دیا۔ 'اِس کام میں چاہیے کیا! صرف ایک یا دو لڑکیاں۔ لڑکیاں کیسی بھی ہوں بس میک ایپتھوپ دیں گے۔ اور کیا کرنا۔۔۔۔ڈانس وانس آتا ہو تو اچھا ہے اور نہیں آتا تو بھی کام چل جائے گا۔بس شلوار قمیص پہنی ہو، دوپٹا اتار کر کسی بندے کے گلے میں باندھ دے یا کسی کے منہ پر پھینک دے،جس کے ہاتھ میں زیادہ پیسے ہوں۔ڈانس میں اپنے ابھارو دکھانے اور ہلانے ہیں، کمر اور پھر کولہے مٹکانے ہیں، بس اُن پینڈوؤں نے خوش ہو جانا۔ کمال کی بات تو یہ ہے …

خدائی صفت

Image
"بس کرو اپنے خیالوں میں نہ رہا کرو۔ اس اصل دنیا میں آؤ ، یہاں ایسے شہزادے نہیں ہوتے ۔ اِس حقیقت کی دنیاکے حساب سے چلو۔"سمیرہ نے اپنی سہیلی ثریا کو اپنا متخیلہ آزاد رکھنے سے روکا۔ ثریا کو وہ یہ بات کافی بار کہہ چکی تھی اور اسے یقین تھا کہ اسپر پھر بھی کوئی اثر نہیں ہوگا، لیکن پھر بھی وہ کہنا نہیں چھوڑتی تھی کہ بالآخر شایدوہ مان ہی جائے۔ ثریا پتا نہیں کیا سوچتی ہو، سمیرہ نےایسے ہی کسی شہزادے کا ذکر کر دیا ۔ ایک وجہ یہ تھی کہ لڑکیاں اکثر ایسی ہی سوچ میں ہوتی ہیں اور دوسری وجہ تھی کہ اس نےثریاکے ہاتھ میں "قراقرم کا تاج محل" دیکھ لیا تھا۔ اور اس سے اولذکر کی توثیق ہوگئی۔ اِس ناول میں بھی ایک ایسی ہی کہانی ہے ۔ اسے لگا اور اس "لگنے" میںمکمل تیقن تھی کہ وہ بھی "افق ارسلان " جیسے کسی شہزادے کی بابت سوچتی ہو گی۔ اسے معلوم تھا کہ ابھی وہ اکیلی ہے یعنی اس کاکوئی بندہ نہیں ہے، وہ کسی نیم ازدواجی رشتے میں نہیں بندھی ہوئی، اس لیے یقیناً بندوں کی بابت اور ایسےالفت سے پُر رشتوں کی بابت سوچتی ہوگی۔ وہ غلط نہیں تھی لیکن اس کا قیاس سو فیصد درست بھی نہیں تھا ۔ ثریا…